بلوچستانپاکستانپہلا صفحہتاریخ

بلوچستان کے معدنی وسائل و مسائل اور کہانی ریکوڈک کی 6

ڈاکٹر غلام سرور جیالوجسٹ

پانچواں حصہ

’’بلوچستان کے معدنی وسائل و مسائل اور کہانی ریکوڈک کی‘‘ پہلا،دوسرا،تیسرا ،چوتھا اور پانچواں حصہ پڑھنے کےلئے نیچے دیے گئے لنکس پر کلک کریں۔

بلوچستان کے معدنی وسائل و مسائل اور کہانی ریکوڈک کی 1

بلوچستان کے معدنی وسائل و مسائل اور کہانی ریکوڈک کی 2

بلوچستان کے معدنی وسائل و مسائل اور کہانی ریکوڈک کی 3

بلوچستان کے معدنی وسائل و مسائل اور کہانی ریکوڈک کی 4

بلوچستان کے معدنی وسائل و مسائل اور کہانی ریکوڈک کی 5

تعلیم اور تکنیکی ٹریننگ

Environmental Science
Environmental Science

اس حوالے سے میں یہ کہنا چاہوں گا کہ پاکستان میں ارضیاتی اور ماحولیاتی تعلیم (Earth Sciences and Environmental Science)  پرائمری درجہ سے شروع کی جائے اور مڈل سے ہائی اسکول پہنچتے ہوئے بچوں کو اپنے وسائل اور ماحولیات کا خوب اندازہ ہوجانا چاہیے۔آج کی دنیا میں، جب دنیا کی آبادی سات بلین سے آگے جا رہی ہے، یہ علم اور احساس پیدا ہونا بے حد ضروری ہے

اس کے علاوہ کالجوں اور یونیورسٹیوں میں ارضیاتی مائیننگ اور ماحولیاتی نصاب کا سٹینڈرڈ اور بلند کیا جائے۔ پاکستانی اور غیر ملکی تعلیمی اداروں کے باہم روابط اور تبادلوں سے ہم اپنا معیار بلند کرسکتے ہیں۔ اسی طرح تعلیم کے دوران ہمیں اپنے طلبا کی ٹریننگ کابندوبست متعلقہ انڈسٹری کے تعاون سے کروانا چاہیے۔اپرنٹس شپ اور’کام پر ٹریننگ‘ کا کوئی بدل نہیں۔

Internship
Internship

امریکہ میں طلبا تعلیم کے دوران ٹریننگ کے لیے اپنی مرضی کی کمپنیوں میں (Internship) کے لیے جاتے ہیں اور چند ماہ زندگی کے حقیقی مسائل پر کام کرتے ہیں۔ اس طرح بہت سی کمپنیاں بعد میں تعلیم پوری ہونے پر انھیں جاب آفر دے دیتی ہیں اور اس طرح روزگار کا مسئلہ حل ہوجاتا ہے۔

مالی فنڈنگ اور ٹیکنالوجی کمیاب یا نایاب

بلوچستان میں سیندک اور ریکوڈک جیسے پراجیکٹس سے قطع نظر پاکستانی مائننگ انڈسٹری چھوٹے پیمانے پر گڑھے ، سرنگیں، نالیاں اور کواریاں کھودنے پر مشتمل ہے (یہاں کوئلے کی کانوں کی بات ہم نہیں کر رہے ہیں) ۔

ایسے کاموں میں ماہر فن افراد کا کال ہے اور مالی فنڈنگ اور ٹیکنالوجی کمیاب یا نایاب ہے ۔ ہونا تو یہ چاہیے کہ سیندک اور ریکوڈک جیسے پراجیکٹس کے ذریعے ہم لوگوں کو روزگار اور سرکار کو آمدنی فراہم کریں اور ساتھ ساتھ تکنیکی مہارت اور ٹیکنالوجی ٹرانسفر بھی کروائیں، تاکہ آگے چل کر خود کفیل ہواجاسکے۔

Reko Diq
Reko Diq

روایتی تنگ نظری اور مذہبی تعصبات

اس مد میں وہ تمام باتیں آتی ہیں جن کی وجہ سے رقص وموسیقی ، گائیکی ، ڈرامہ، آرٹ،پینٹنگ ، تھیٹر، فلم اور بت تراشی میں مسلمانوں نے عموماً اور جنوبی ایشیاء کے مسلمانوں نے خصوصاً اپنے آپ کو بالکل مفلوج کر رکھا ہے۔ میں یہاں کسی بحث میں پڑے بغیر صرف اتنا کہوں گا کہ انہی چیزوں سے انسان کی زندگی میں رنگ ہے اور خوبصورتی اور خوشگواری آتی ہے۔

روایتی تنگ نظری اور مذہبی تعصبات کی وجہ سے ہم نے سنگتراشی کو گل کاری اورجالی کے کام تک ہی محدود رکھا جیسا کہ مغلیہ دور کی عظیم الشان عمارتوں کے کام سے ظاہر ہے۔ اس کے برعکس ہند، چین ، روس اور مغربی دنیا میں آرٹ اور سنگتراشی کے فنون کو عروج پر پہنچایا گیا ۔

اٹلی میں مائیکل انجیلو جیسے اساتذہ

اٹلی میں مائیکل انجیلو جیسے اساتذہ نے سنگتراشی میں انسانی جسم کو سنگ مر مر میں ڈھالنے میں حرف آخر کہا ۔ کہتے ہیں کہ جب اس نے حضرت داؤد ؑ کا سنگ مر مر کا مجسمہ مکمل کیا تھا تو وہ اپنے فن پر اس قدر نازاں تھا کہ اپنے تخلیق شدہ مجسمے کے گھٹنے پر ہولے سے ہتھوڑا رکھ کر اس نے کہا تھا کہ ’’ اب بول ‘‘ ۔یہ شاہکار اٹلی میں آج بھی دیکھا جاسکتا ہے اور اس کا حسن لازوال معلوم ہوتا ہے۔

بلوچستان کے خوبصورت پتھر

Beautiful stones of Balochistan
Beautiful stones of Balochistan

بلوچستان کے خوبصورت پتھر جیسے چاغی کا آنکس (Onyx) ماربل اور لس بیلہ کی سبز اور لال سرپنٹین (Serpentine) جیسے شاندار پتھروں کو تراشنا پاکستان میں کسی کو نہیں آتا۔

کراچی میں جولوگ اس سے برتن ، ظروف اور اینڈے بینڈے جانور تراشتے ہیں وہ فن کاری نہیں جانتے ۔ یہی پتھر جب چین اور اٹلی جا کر تراشے جاتے ہیں تو انسان سبحان اللہ کہہ اٹھتا ہے۔

کاش اگر ہم خام پتھر باہر بھیجنے کے بجائے اسے دیدہ زیب برتنوں، مجسموں او رسجاوٹی اشیا میں تراش کر باہر کے ملکوں کو بھیجنے کے قابل ہوجائیں تو کس قدر منافع ہو۔ حال ہی میں کوئٹہ میں ایک پتھر تراشی سکھانے کا ادارہ قائم تو ہوا ہے مگر ہنوز دلی دور است، اور سچی بات تو یہ ہے کہ ابھی تو شکار پور بھی نہیں آیا ہے۔                                       جاری ہے۔ ۔ ۔ ۔ ۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ خریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close